×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

پیامبر (ص) اور ائمہ اطہار کا احترام

مرداد 01, 1393 401

ابن تیمیہ وہابیت کا نظریاتی بانی ہے اور انکار توسل سمیت وہابی عقائد کو اسی نے اختراع کیا ہے لیکن ابن تیمیہ کے بارے میں بھی ایک روایت

دیکھنا بےجا نہ ہوگا:
ابن کثیر ابن تیمیہ کے جنازے کے بارے میں لکھتا ہے: جنازے کے شرکاء نے اپنے دستار اور رومال تبرک کے طور پر ابن تیمیہ کی میت پر پھینکے۔۔۔ اور "اس کے غسل کے پانی کو تبرک کے عنوان سے پی لیا!!"؛ یہ ان لوگوں کا عمل تھا جو ابن تیمیہ کے براہ راست شاگرد تھے۔
ایک دن مروان نے ایک شخص کو دیکھا جس نے پیشانی قبر نبی (ص) پر رکھی تھی۔ مروان نے اس کی گردن پکڑ لی اور کہا: جانتے ہو کیا کررہے ہوں؟ اس شخص نے سر اٹھایا تو مروان نے دیکھا کہ وہ ابو ایوب انصاری ہیں۔
ابو ایوب نے کہا: میں پتھر کے پاس نہیں آیا رسول اللہ (ص) کے پاس آیا ہوں۔ میں رسول اللہ (ص) سے سنا جو فرما رہے تھے: اپنے دین پر گریہ نہ کرو جب امت کے اہل افراد اس کے کرتے دھرتے ہوں بلکہ اس وقت اپنے دین کے لئے گریہ کرو جب نا اہل افراد حاکم اور عہدہ دار ہوجا‏ئیں۔ (1) عجب ہے کہ مروان کو رسول اللہ (ص) نے جلاوطن کیا تھا اور خلیفہ ثالث نے اس کو مدینہ بلوایا اور مروان یا امویوں نے زیارت اور توسل کی مخالفت کی جن کی پیغمبر دشمنی پر پوری اسلامی تاریخ گواہ ہے اور آج بھی جو لوگ مخالفت کررہے ہیں نہ صرف امویوں کی تعلیمات پر کاربند ہیں بلکہ ان کا نام و نشان اور لقب و کنیت استعمال کرکے فخر کے ساتھ مسلمانوں کے لئے بلائے جان و ایمان، اسلام کے لئے مصیبت اور کفر کے لئے سرمایۂ امید بنے ہوئے ہیں۔
حوالہ جات:
1۔ مستدرك حاكم، ج 4 ص 515۔ تاریخ طبری، ج 1 ص 80۔

Login to post comments