×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830
جيسا کہ آپ کے پيش نظر ہے
پھر فرمايا: قرآن اس کے بعد
”‌  وَفِيہِ بِاَسْنٰادِہِ عَنْ سعد الخفافِ
القُرآنُ يَشْفَعُ لقارئيہ يَوْمَ القيٰمَةَ ”¤
خداوند متعال کي
وقف کے ساکن کي طرح
کسي عبارت کے پڑھنے ميں
تفخيم کے معني ھيں حرف کو موٹا بنا کر ادا کرنا -
چونکہ علم تجويد ميں
والّذين صبروا ابتغاء وجہ
حروف پر آنے والي
جس طرح حروف مخارج
يہ ہے كہ خود اللہ كو
دوسرا قاعدہ اس بات پر
اس منزل ميں تين قاعدے بيان كئے جا سكتے ہيں
علوم قرآن کي اقسام کي فہرست درج ذيل ہے
قرآن مجيد معارف کا سب سے بڑا خزانہ،
” ”‌الا تنصروہ فقد نصرہ اللہ