×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

دبئی میں قیدی قرآن حافظہ کی کہانی پر فلم بنائی جائے گی

خرداد 14, 1393 459

دبئی کی جیل سے قرآن مجید حفظ کرنے پر قبل از وقت رہائی پانے والی ایک خاتون قیدی کی کہانی پر ایک مشہورعرب انٹر ٹینمنٹ کمپنی نے

فلم بنانے کا اعلان کیا ہے۔کینوپس فلمز نامی اس پروڈکشن کمپنی کی مالکہ گلوکارہ لیلا کیلیف ہیں۔انھوں نے فاطمہ بنت محمد سے ان کی کہانی پر مبنی فلم بنانے کے لیے رابطہ کیا ہے۔ایک ذریعے نے دبئی کے روزنامے سات یوم کو بتایا ہے کہ ہم برطانیہ /امریکا کی ایک پروڈکشن کمپنی سے اس ضمن میں رابطہ کریں گے۔
اس ذریعے کا کہنا ہے کہ ہم نے اس فلم کا ایک خاکہ تیار کر لیا ہے اور اس کو متحدہ عرب امارات ہی میں فلمانے کے لیے اجازت لینا چاہتے ہیں۔حافظہ فاطمہ بنت محمد کیمرون کی شہری ہیں۔انھیں 2007ء  میں یواے ای میں حشیش درآمد کرنے کے جْرم میں عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی لیکن انھیں قرآن مجید حفظ کرنے پر مارچ میں رہا کردیا گیا تھا۔
واضح رہے کہ دبئی کی جیل میں قید افراد اگر قرآن مجید حفظ کرلیتے ہیں تو انھیں حکومت کے ایک منصوبے کے تحت اس سعادت پر قبل از وقت رہائی مل جاتی ہے۔اگر فاطمہ بنت محمد کی کہانی پر فلم بنانے کے منصوبے کو عملی جامہ پہنایا جاتا ہے تو کمپنی انھیں اپنی ٹیم میں ان کی پسند کے مطابق کوئی عہدہ پیش کرے گی۔اگر وہ ابتدائی معاملے کو قبول کر لیتی ہیں تو انھیں فلم کے حقوق دینے یا اس کے منافع میں سے کچھ حصہ دینے پر مزید بات کی جا سکتی ہے۔واضح رہے کہ فاطمہ کا سابقہ نام نوئل شانٹیلی تھا۔وہ قریباً چھے سال تک دبئی کی جیل میں قید رہی تھیں اور قرآن مجید حفظ کرنے پر انھیں قید کی باقی مدت میں معافی مل گئی ہے۔انھوں نے اپنی کہانی پر مبنی فلم بنانے کا خیرمقدم کیا ہے اور اس سلسلہ میں پروڈکشن کمپنی سے مزید بات چیت کا ارادہ رکھتی ہیں۔

Login to post comments