×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

گاجر کے فائدے

مهر 26, 1392 1981

گاجر ، دنیا کے تمام ممالک میں  بہت ہی پسندیدہ سبزی تصور ہوتی ہے اور یہ بہت ہی مقوی  غذا  ہے ۔گاجر کے سبز  پتوں میں بھی پروٹین ، معدنیات اور وٹامنز

وافر مقدار میں پاۓ جاتے ہیں جو صحت کے لیۓ بہت ہی مفید ہوتے ہیں ۔ گاجر کو دو طرح کی اقسام میں تقسیم کیا گیا ہے ۔ ایک ایشیائی گاجر ہوتی ہے جو لمبی ، گہرے رنگ والی اور میٹھی ہوتی ہے جبکہ  دوسری یورپی گاجر ملائم جلد والی اور کم ریشے کے ساتھ بہتر جسامت کی حامل تصور کی جاتی ہے ۔ گاجر وٹامن اے کا  بہت ہی اچھا ذریعہ ہے ۔ گاجر میں وافر مقدار میں سوڈیم ،سلفر،کلورین ، اور کچھ مقدار میں آیوڈین ہوتی ہے ۔ گاجر کو استعمال کرتے ہوۓ اس بات کا خیال رکھیں کہ گاجر کو چھیلنے سے اس کے معدنی اجزاء کے ضا‏ئع ہو جانے کا اندیشہ  ہوتا ہے اس لیۓ گاجر کو بغیر چھیلے ہی استعمال کرنا چاہیۓ ۔

گاجر کے مندرجہ ذیل فوائد ہیں ۔

 ٭ گاجر میں پاۓ جانے والے کھاری اجزاء انسانی جسم میں خون کو صاف رکھتے ہیں ۔

 ٭ یہ بدن کی نشوونما کرنے کے ساتھ  ساتھ جسم میں  تیزابیت پیدا کرتی ہے ۔

 ٭گاجر کے جوس کو  " کرشماتی مشروب "  کہا جاتا ہے جو بچوں اور بڑوں کے لیۓ یکساں مفید ہے ۔

 ٭ گاجر کا جوس آنکھوں کو توانا  کرتا ہے ۔

 ٭  انسانی جلد کو تروتازہ رکھنے میں گاجر بہت ہی معاون ثابت ہوئی ہے ۔

 ٭ کھانے کے بعد گاجر کو چبا کر کھانے سے منہ میں پا ۓ جانے والے جراثیم ہلاک  ہو جاتے ہیں ۔ مسوڑھوں سے خون بند ہو جاتا ہے اور دانتوں کا انحطاط رک جاتا ہے ۔

 ٭ گاجر ہاضمہ کی خرابیوں کو دور کرنے میں معاون ثابت  ہوتی ہے ۔

 ٭ معدے کے السر کو  گاجر کا استعمال روکتا ہے اور ہاضمہ کی دیگر بیماریوں سے نجات دیتا ہے ۔

 ٭ چھوٹی اور بڑی آنت کی بہت سی بیماریوں میں مؤثر ہے ۔

 ٭ گاجر اور پالک کا جوس ملا کر پینے سے قبض رفع ہو جاتی ہے  اور انتڑیاں صاف ہو جاتی ہیں ۔

 ٭ دوران اسہال گاجر کا جوس پانی اور نمکیات کی کمی کو پورا کرتا ہے ۔

 ٭ پیٹ کے کیڑوں کے لیۓ بھی گاجر کا جوس بےحد مفید ہے ۔

 گاجر کو مختلف طریقوں سے استعمال کیا جا سکتا ہے  مثلا ابال کر ، سلاد کے طور پر ، پکا کر یا جوس بنا کر ۔

Last modified on دوشنبه, 05 خرداد 1393 13:44
Login to post comments