×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

کمر درد کي وجوھات سے آگاہي ضروري ہے (حصّہ دوّم)

مهر 27, 1392 538

کمر درد کي وجوھات کمر درد کی مختلف ممکنہ وجوھات کا ہم یہاں مختصر طور پر ذکر کریں گے ۔٭  طولانی مدت کے لیے کھڑے رہنا٭ غیر مناسب حالت میں

بیٹھنا٭ بعض ورزشیں کمر درد کا باعث بن جاتی ہیں

٭کسی  وزنی چیز کو بلند کرنا

٭غیر مناسب حالت میں  جھکنا یا غیر مناسب حالت میں گھومنا 

٭ یہ بھی ممکن ہے کہ کمر میں کوئی چھوٹی موٹی خرابی موجود ہے مگر یہ اس وقت سامنے آتی ہے جب اس حصے پر پریشر آ جاۓ ۔

٭ انفکشن، ٹیومر، ہڈی کا ٹوٹنا یا  دوسری چوٹیں کمر درد کا باعث بن سکتی ہیں ۔ ایسی حالت میں آرام کرتے ہوۓ بھی درد کا احساس ہوتا ہے ۔ بعض اوقات بخار اور وزن میں کمی بھی اس حالت میں لاحق  ہو سکتی ہے ۔

متعلقہ شخص کے لیۓ ضروری ہے کہ فوری طور پر کسی قریبی فیزیوتھراپست یا کسی دوسرے معالج سے رجوع کرے ۔  بعض عام  وجوھات جن میں کمر درر ہو سکتی ہے ہم یہاں ان میں سے کچھ پر بات کرتے ہیں ۔

 کھنچاؤ اور  ہلکے زخم

یہ حالت اچانک کسی بلندی سےگرنے ، ٹریفک حادثے یا کھیل میں چوٹ لگنے سے پیش آ سکتی ہے ۔ بعض اوقات بہت زیادہ وزنی چیز کو اٹھانے سے بھی یہ مسئلہ پیش آ سکتا ہے ۔ ایس حالت میں ممکن ہے  ریڑھ کی ہڈی کے گرد نرم  حصوں میں کھنچاؤ آ جاۓ یا کوئی حصہ معمولی سا پھٹ جاۓ ۔ ایسا ہونے کے بعد جسم کا مدافعاتی نظام حرکت میں آ جاتا ہے ۔ سوزش کے ساتھ درد کا احساس ہونا شروع ہو جاتا ہے ۔  نیند سے بیدار ہونے کے بعد جب حرکت کریں تو درد کا احساس شدت اختیار کر جاتا ہے ۔

 موٹاپا

ریڑھ کی ہڈی جسمانی وزن کو  ایک خاص حد تک تحمل کرتی ہے ۔ اگر انسان کا وزن حد سے زیادہ ہو جاۓ تو اس کا نتیجہ ریڑھ   کی ہڈی پر دباؤ کی صورت میں نکلتا ہے  جس کی وجہ سے ڈھانچے میں  ہلکی تبدیلی کا خطرہ ہوتا ہے ۔ موٹاپا ہڈیوں کی اور بہت سی بیماریاں مثلا  اسٹیوپروسس اور جوڑوں میں توڑ پھوڑ کے عمل کی زیادتی کا باعث بھی بنتا ہے ۔

عمر میں زیادتی

بڑھاپے میں ڈسک اور جوڑوں کے اندر موجود مایع حالت میں موجود مادہ کم ہونا شروع ہو جاتا ہے ۔ ان تبدیلیوں کی وجہ سے اعصاب پر پریشر پڑتا ہے جس کے بعد انسان بے حسی اور کمزوری کا شکار ہو جاتا ہے ۔ بیماری اگر شدت اختیار کر جاۓ تو بڑھاپے میں کمر میں خم آ جاتا ہے جس کی وجہ سے بوڑھے افراد کو ہمیشہ جھک کر چلنا پڑتا ہے۔

Last modified on دوشنبه, 05 خرداد 1393 12:03
Login to post comments