×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

چلغوزہ کھائیں سردی سے لطف اٹھائیں

دی 24, 1393 406

عربی حب صنو بر کبار فار سی چلغوزہ سندھی نیز ا انگریزی Filler Nut اس کے چھلکے کا رنگ سرخ اور مغز سفید ہوتا ہے۔ ذائقے میں یہ

قدرے شیریں اور خوش ذائقہ ہوتا ہے۔ اس کا مزاج گرم اور تر درجہ اول ہے۔ مقدار خوراک، ایک تولہ سے ڈیڑھ تولہ ہے۔ اس کے حسب ذیل فوائد ہیں۔ چلغو زہ کے فوائد (1 ) چلغوزہ مقوی اعصا ب ہے۔ (2 ) بھوک بڑھا تا ہے۔ (3) لقوہ اور فالج میں اس کا مسلسل استعما ل مفیدہے۔ (4 ) پرانی کھانسی میں مغز چلغوزہ رگڑ کر شہد میں ملا کر چٹانا مفید ہو تا ہے۔ (5 ) مغز کھیرا اور مغز چلغوزہ ہم وزن استعمال کرنے سے بند پیشاب جا ری ہو تاہے۔ ( 6 ) مغز چلغوزہ، جریا ن، یر قان اور درد گردہ میں بے حد مفید ہے۔ (7 ) اس کاکھا نا جسمانی گوشت کو مضبو ط کرتا ہے۔ (8 ) رعشہ اور جوڑوں کے درد میں مغز چلغوزہ صبح و شام ہمراہ پانی یا قہوہ یا چائے کے ساتھ استعمال کرنے سے فائدہ ہو تا ہے۔ (9 ) ریا ح کو دور کر تا ہے۔ (10 ) ما د ہ تو لید کو پیدا کرتاہے۔ (11)مقو ی باہ ہے۔ ( 12 ) دل اور دماغ کو تقویت دیتا ہے۔ (13 ) سردیوں میں اس کا استعمال زیا دہ ہو تاہے۔ (14 ) دمہ میں بھی مغزچلغوزہ کو شہد کے ہمراہ رگڑ کر چٹانا مفید ہوتا ہے۔ لیکن مریض کو چاولوں سے پرہیز کروانا ضروری ہو تاہے۔ (15) گردہ کو طا قت دیتاہے۔ (16 ) یہ جگر، مثانہ اور آلات تنا سل کے لیے بے حد مفید ہے۔ (17)سدے کھولتا ہے۔ (18 ) چلغوزہ دیر ہضم ہوتاہے۔ اس لیے مقدار سے زیادہ کھا نے میں احتیاط ضروری ہے۔ (19 ) بلغمی مزاج والوں کے لیے سردیوں کا یہ ایک معتدل ٹانک ہے۔ (20 ) کھا نا کھانے کے بعد اس کا استعمال مفید ہوتا ہے۔ (21 ) مغز چلغوزہ دودھ کے ہمراہ کھا نے سے جسم مو ٹا ہوتا ہے۔ (22 ) گنٹھیا کے مرض میں اس کا استعمال مفید ہے۔ ( 23 ) خون کے فساد کو دور کر تا ہے۔ (24 ) فالج اور رعشہ میں مغز چلغوزہ ایک تولہ اور شہد چھ ماشہ ملا کر کھلا نا بے حد مفید ہے۔ (25 ) چلغوزہ کے چھلکوں پر روغن سا لگا ہوتا ہے۔ جو چھیلتے وقت مغز کے ساتھ لگ جا تا ہے۔ اور ایسے مغز کھا نے سے معدے میں سوزش ہو جا تی ہے اور گلے کی خرا ش کا بھی احتمال ہوتا ہے۔

Login to post comments