×

هشدار

JUser: :_بارگذاری :نمی توان کاربر را با این شناسه بارگذاری کرد: 830

آخر الزمان کے فتنے

مرداد 10, 1393 415

"اور لوگوں پر موت اور قتل پھیل جائے گا اور لوگ خدا کے حرم اور رسول اللہ (ص) کے حرم میں پناہ لیں گے"۔ (1) "حضرت قائم (ع) کے ظہور سے

قبل پانچ نشانیاں ظاہر ہونگی: صیحہ (مہیب آواز)، سفیانی، (بیداء میں) دھنس جانا، نفس زکیہ کا قتل اور یمانی کا ظہور۔ (2)
"تین واقعات رونما ہونے پر ظہور کے منتظر رہو! راوی کہتا ہے: ان تین واقعات کے بارے پوچھا گیا تو امیرالمومنین (ع) نے فرمایا: اہلیان شام میں اختلاف، خراسان سے سیاہ پرچموں کا ظہور اور ماہ مبارک رمضان میں صیحہ؛ (مہیب آواز)، پوچھا گیا: صیحہ کیا ہے؟ تو امیرالمومنین (ع) نے فرمایا: کیا تم نے اللہ عز وجل کا یہ ارشاد نہیں سنا ہے: "اگر ہم چاہیں تو آسمان سے ایک نشانی ایسی اتاریں کہ زبردستی ان کی گردنیں اس کے سامنے جھک جائیں"؛ (3) اور فرمایا: یہ آواز اتنی شدید ہوگی کہ دوشیزائیں پردوں سے باہر آئیں گی، سوئے ہوئے جاگیں گے اور جاگے ہوئے خوفزدہ ہونگے"۔ (4)
"مہدی (ع) ایسے حالات میں ظہور کریں گے جب لوگ غفلت کا شکار ہوجائیں، حق لوگوں کے درمیان سے رخصت ہوجائے اور ظلم آشکار ہوجائے۔ (5)
رسول اللہ (ص) نے فرمایا: جبیر بن نوف ابی الوداک کہتا ہے: میں نے ابی سعید الخدری سے کہا: خدا کی قسم! کہ ہمارا ہر سال گذشتہ سال سے بدتر ہے اور ہر حاکم و امیر سابقہ حاکم سے بدتر ہے؛ ابو سعید نے کہا: میں نے رسول اللہ (ص) سے یہی سنا ہے جو تم کہہ رہے ہو، تاہم میں نے یہ بھی آپ (ص) سے سنا ہے کہ "تمہارے اوپر یہ فتنہ باقی رہے گا حتی کہ بہت سے لوگ فتنے اور ظلم میں ہی پیدا ہونگے اور اس کے سوا کسی چیز کو نہیں پہچانیں گے حتی کہ زمین ظلم و جور سے بھر جائے گی حتی کہ کوئی "اللہ" نہیں کہہ سکے گا"۔ (6)
"ایسی بلا اس امت پر چھا جائے گی حتی کہ کسی کو ظلم سے چھٹکارا پانے کے لئے پناہ گاہ میسر نہ ہوگی پس خداوند متعال ایک مرد میری عترت سے، اٹھائے گا پس وہ زمین کو عدل و انصاف سے بھر دے گا جس طرح کہ یہ ظلم و جور سے بھری ہوئی ہوگی"۔ (7)
حوالہ جات:
1۔ بحار الانوار ـ ج 51 ۔ ص 365۔
2۔ بحار الانوار ج 52 ص 304۔
3۔ سورہ شعراء (26) آیت 4۔
4۔ بحار الانوار ج 52 ص 285۔
5۔ بحارالانوار ج 51 ص 39 حدیث 19۔
6۔ بحارالانوار  ج 51 ص 68۔
7۔ بحار الانوار ج 51 ص 104۔
ترجمہ: فرحت حسین مہدوی

Login to post comments