×

Warning

JUser: :_load: Unable to load user with ID: 830

مودی حکومت کی پہلی شکست

June 28, 2014 533

یونیورسٹی خود مختاری اغوا کا ایک کھیل دہلی میں چل رہا ہے. اس کھیل میں اتفاق سے یونیورسٹی گرانٹ کمیشن، سی پی ایم اور

بی جے پی ایک ہی اسٹیج پر آکر مل گئے ہیں. اس کھیل کی خوبی ہے کہ یہ تینوں کھلاڑی آئین، تعلیمی خود مختاری اور دانشورانہ آزادی ان تینوں کا مذاق اڑانے میں لگے ہیں.

گزشتہ ہفتہ مودی حکومت آنے کے بعد یو جی سی نے دہلی یونیورسٹی کو سرکلر بھیج کر چار سالہ بی اے کورس بند کرنے کی ہدایت دی، وہ مکمل طور پر غیر آئینی ہے. یو جی سی اس طرح کا حکم کسی بھی یونیورسٹی کو نہیں دے سکتا. سوال یہ ہے کہ یو جی سی نے جب یہ کورس نافذ کیا گیا اس وقت یہ رائے کیوں نہیں دی؟
یو جی سی تجویز دے سکتی ہے، حکم نہیں. یو جی سی کے احکامات کی حقیقت یہ ہے کہ گجرات میں اب تک کالج - یونیورسٹیوں میں چھٹے تنخواہ کمیشن کی بنیاد پر بنے تنخواہ نافذ نہیں ہوئی ہیں. مغربی بنگال میں اساتذہ کا چھٹے تنخاواہ کی بنیاد پر تنخواہ ملی لیکن بقایا رقم ابھی تک نہیں مل پائی ہے. ایسی بہت ساری مثالیں ہیں جو دی جا سکتی ہیں. اصل بات یہ ہے کہ یونیورسٹی گرانٹ کمیشن کو یونیورسٹیوں کی خود مختاری میں مداخلت کرنے کا کوئی حق نہیں ہے. یہاں تک کہ پارلیمنٹ کو بھی حق نہیں ہے. وزیٹر کو بھی حق نہیں نہیں ہے. وزیٹر یا تعلیم کسی بھی فیصلہ کے ایک ماہ کے اندر مخالفت کرتا ہے تو وہ مخالفت  قابل غورہوتی ہے. اگر ایک ماہ کے بعد رائے آتی ہے تو غور کے  قابل بھی نہیں ہوتی۔

یونیورسٹی کے فیصلہ تعلیمی کونسل لیتی ہے، ایگزیکٹو کونسل لیتی ہے. تعلیم وزیریا یو جی سی نہیں. یو جی سی نے دہلی یونیورسٹی کو چارسالہ کورس کو خارج کرنے کا حکم دے کر اپنے آئینی دائرہ کار پر قبضہ کیا ہے. یو جی سی کو جواب دینا ہوگا کہ گزشتہ وقت میں اس نے اور اس کے افسران نے یہ فیصلہ کیوں نہیں لیا؟ کیوں یونیورسٹی کورس نافذ کرنے کو کہا؟ کیا ان افسران کے خلاف کوئی کارروائی ہوئی؟ ہمارے حکمرانوں کو بیوروکریسی کو سامان بنا کر کام کرنے سے باز آنا چاہئے.

   چارسالہ کورس کے معیار اور بغیر معیار، آئینی اورغیر آئینی ، مطابقت یا نا مطابقت پر بحث کا وقت ختم ہو چکا ہے کیونکہ کورس نافذ ہو چکا ہے. ہزاروں طالب علم ایک سال سے پڑھ رہے ہیں، نئے داخلہ ہونے جا رہے ہیں. ریویو ہی کرنا ہے تو پہلے بیچ کا نکلنے پر ریویو کرو. لیکن یہ کام تعلیمی کونسل کرے گی نہ کہ یو جی سی. چارسالہ کورس متعلقہ ہے یا نہیں یہ طے کرنے کا کام یونیورسٹی کا ہے. یہ کورس طے کرتے وقت اکثریت سے طے پایا گیا کہ کورس شروع کیا جائے. تمام اس فیصلہ کو ماننے کو مجبور ہیں. اس معاملہ میں سی پی ایم - بی جے پی کی ہٹ دھرمی دیکھنے لائق ہے.

اساتذہ یونین اس کی مخالفت میں تھا کئی طلباء تنظیم بھی مخالفت میں تھیں، کئی سیاسی پارٹیاں بھی مخالفت میں تھیں. لیکن یونیورسٹی کے فیصلہ تعلیمی کونسل میں ہوتے ہیں اور یونیورسٹی کی تعلیمی کونسل نے  اپوزیشن پر غور کرنے کے بعد یہ کورس شروع کیا. تعلیم کے فیصلہ سڑکوں پر جلوسوں اورمظاہرہ مقامات یا فیس بک پر نہیں ہوتے.

یہ مسئلہ کئی بار یو جی سی میں بھی گیا، کئی عقل مند لوگوں نے یو جی سی سے لے کر وزیر تعلیم، وزیر اعظم، پارلیمنٹ اور صدر تک اپنی رائے بھیجی لیکن کہیں سے بھی یہ نہیں کہا گیا کہ یونیورسٹی یہ کورس بند کر دے. سب نے کہا یہ یونیورسٹی کا اندرونی معاملہ ہے بیرونی سیاسی مداخلت نہیں ہونا چاہئے.

لیکن بی جے پی کو مینڈیٹ ملتے ہی پہلا حملہ دہلی یونیورسٹی کی خود مختاری پر ہوا جو قابل مذمت ہے. بی جے پی کے انتخابی منشور میں چارسالہ بی اے کورس کو ختم کرنے کا وعدہ کیا گیا ہے. مودی کے حکمراں ہوتے ہی موجود  کئی لوگ غیر آئینی ہتھکنڈوں کو استعمال کر کے یہ کورس بند کرانا چاہتے ہیں جبکہ اس معاملہ میں اصولوں کے مطابق د ہلی یونیورسٹی انتظامیہ بہترین راستہ کی پیروی کر رہا ہے. کل کے تعلیمی کونسل کے فیصلہ کے بعد یہ صاف ہو چکا ہے کہ بی جے پی اور سی پی ایم کے اساتذہ تنظیموں کے پاس تعلیمی کونسل میں حمایت کا فقدان ہے. صرف 10 اساتذہ ان کے حق میں تھے باقی تمام نے یونیورسٹی کے حق کی حمایت کی. یہ یو جی سی اور  بی جے پی کی پہلی بڑی شکست ہے. یہ مودی حکومت کے خود مختاری اغوا مہم کی پہلی بڑی شکست ہے.

اس معاملہ میں قابل ذکر ہے کہ دہلی یونیورسٹی کو چارسالہ کورس نافذ کرنے پر پچھلی حکومت کی مکمل حمایت تھی، پارلیمنٹ سے لے کر وزیر اعظم تک، یو جی سی سے لے کر تعلیم وزیر تک سب نے گزشتہ سال مداخلت کرنے سے منع کیا اور دہلی یونیورسٹی انتظامیہ کا ساتھ دیا. مودی حکومت کو پرانی حکومت کے اس فیصلہ کا احترام کرنا چاہئے.
جگدیشور چترویدی
(جگدیشور چترویدی. مصنف ترقی پسند مفکر، ناقد  ہیں. جواہر لال نہرو یونیورسٹی طالب علم یونین کے صدر رہے چترویدی جی آج کل کولکاتہ یونیورسٹی میں پروفیسر ہیں. )

Login to post comments