Loading...

  • 05 Mar, 2024

ماسکو میں ہندوستانی سفارت خانے کے ایک ملازم نے مبینہ طور پر پاکستان کو حساس معلومات فراہم کی تھیں۔

شمالی ہندوستان کی ریاست اتر پردیش میں انسداد دہشت گردی اسکواڈ (اے ٹی ایس) نے ماسکو میں ہندوستانی سفارت خانے کے ایک ملازم کو گرفتار کیا ہے، جس پر پاکستان کی انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) ایجنسی کی جانب سے جاسوسی کا شبہ ہے۔

ہندوستانی میڈیا آؤٹ لیٹس کی رپورٹوں کے مطابق، ہاپوڑ کے گاؤں شاہماہی الدین پور کا رہائشی ستیندرا سیوال 2021 سے ماسکو ایمبیسی میں 'سکیورٹی اسسٹنٹ' کے طور پر خدمات انجام دے رہا تھا۔ اسے اے ٹی ایس کی جانب سے پوچھ گچھ کے بعد گرفتار کیا گیا، جس کے دوران اس نے مبینہ طور پر اعتراف جرم کیا۔ پاکستانی انٹیلی جنس کے لیے جاسوسی میں ملوث ہونا۔

اے ٹی ایس نے اتوار کو ایک بیان میں کہا کہ اس نے الیکٹرانک اور جسمانی نگرانی کے ذریعہ آئی ایس آئی ایجنٹوں کے ساتھ سیوال کے مواصلات کا پردہ فاش کیا ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ اس نے مبینہ طور پر وزارت دفاع، وزیر خارجہ اور ہندوستانی فوج کے اسٹریٹجک آپریشنز سے متعلق حساس معلومات کا انکشاف کیا۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ ’’وہ آئی ایس آئی کے ہینڈلرز کے نیٹ ورک میں ملوث ہے، جو ہندوستان کی سفارتی اور فوجی سرگرمیوں سے متعلق اہم خفیہ معلومات فراہم کرتا ہے، جس کے بدلے میں مالی مراعات حاصل کی جاتی ہیں۔‘‘

اے ٹی ایس نے آئی ایس آئی پر الزام لگایا ہے کہ وہ ہندوستانی مشنوں کے اہلکاروں کو مالیاتی ترغیبات کے ساتھ اسٹریٹجک انٹیلی جنس کو ظاہر کرنے کی کوشش کر رہی ہے، جو ہندوستان کی سلامتی کے لیے ایک اہم خطرہ ہے۔


خبر رساں ایجنسی اے این آئی نے سرکاری ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ ہندوستانی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ وہ سیوال کی گرفتاری سے آگاہ ہے اور اس معاملے کو حل کرنے کے لیے تفتیش کاروں کے ساتھ تعاون کر رہی ہے۔

نئی دہلی اور اسلام آباد مسلم اکثریتی خطہ کشمیر پر ایک طویل سرحدی تنازعہ میں بند ہیں۔ کشمیر کئی بڑی جنگوں کا مقام تھا، اور فروری 2021 میں طے پانے والی لائن آف کنٹرول اور بین الاقوامی سرحد پر جنگ بندی کے باوجود چھٹپٹ فوجی جھڑپیں جاری ہیں۔

دونوں ممالک کے درمیان تعلقات 2019 میں مزید خراب ہوگئے، جب ہندوستانی پارلیمنٹ نے ہندوستان کے آئین کے آرٹیکل 370 کو ختم کردیا، جس نے ریاست جموں و کشمیر کو خود مختار حیثیت دی تھی۔ اس کے جواب میں پاکستان نے بھارت کے ساتھ اپنے سفارتی اور اقتصادی تعلقات کو سختی سے ختم کر دیا۔